ایک کالی نظم

شہریار

ایک کالی نظم

شہریار

MORE BYشہریار

    میں کورے کاغذ پر لکھوں پھر ایک کالی نظم

    الکھ جگاتے سناٹوں سے پھر سے سجاؤں بزم

    گدر امرودوں کی خوشبو پاگل کر جائے

    میری ان خالی آنکھوں کو جل تھل کر جائے

    دور درندوں کی آوازیں خود سے لڑتی ہوں

    میرے اس کے بیچ میں لمبی راتیں پڑتی ہوں

    شکنوں سے عاری اک بستر مجھ کو تکتا ہو

    جسم مرا جب آدھا سوتا آدھا جگتا ہو

    تب میں کروں یہ عزم

    کہ لکھوں کوئی کالی نظم

    مآخذ :
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 434)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY