ایک خوش خبری

شہریار

ایک خوش خبری

شہریار

MORE BYشہریار

    ہنسو کہ سرخ و گرم خون پھر سفید ہو گیا

    ہنسو کہ نقطۂ امید پھر خلا کے دائرے میں آج قید ہو گیا

    ہنسو کہ دشت آرزو میں تھک تھکا کے سب بگولے سو گئے

    ہنسو کہ شہر زندگی کا بے فصیل ہو گیا

    ہنسو کہ سایۂ صلیب پھر طویل ہو گیا

    مآخذ :
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 254)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY