ایک منجمد لمحہ

راشد جمال فاروقی

ایک منجمد لمحہ

راشد جمال فاروقی

MORE BY راشد جمال فاروقی

    مرے باطن میں

    صد ہا رنگ کے موسم

    کئی منظر، رتیں، طوفان،

    پل پل پل رہے ہیں

    اور اپنی موت مرتے جا رہے ہیں

    کبھی ایسا بھی ہوتا ہے

    کہ اک موسم، کوئی منظر، کوئی رت یا کوئی طوفاں

    تسلسل کی کڑی سے ٹوٹ کر

    اک لمحہ رکتا ہے

    ذرا سا منجمد ہوتا ہے

    اور اک نظم ہوتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY