ایک نئے لفظ کی تخلیق

محسن نقوی

ایک نئے لفظ کی تخلیق

محسن نقوی

MORE BY محسن نقوی

    زندگی لفظ ہے

    موت بھی لفظ ہے

    زندگی کی تراشی ہوئی اولیں صوت سے سرحد موت تک لفظ ہی لفظ ہیں

    سانس بھی لفظ ہے

    سانس لینے کی ہر اک ضرورت بھی لفظوں کی محتاج ہے

    آگ پانی ہوا خاک سب لفظ ہیں

    آنکھ چہرہ جبیں ہاتھ لب لفظ ہیں

    صبح و شام و شفق روز و شب لفظ ہیں

    وقت بھی لفظ ہے

    وقت کا ساز‌ و آہنگ بھی

    رنگ بھی سنگ بھی

    امن بھی جنگ بھی

    لفظ ہی لفظ ہیں

    پھول بھی لفظ ہے

    دھول بھی لفظ ہے

    لفظ قاتل بھی ہے

    لفظ مقتول بھی

    لفظ ہی خوں بہا

    لفظ دست دعا

    لفظ ارض و سما

    صبح فصل بہاراں بھی اک لفظ ہے

    شام ہجر نگاراں بھی اک لفظ ہے

    رونق بزم یاراں بھی اک لفظ ہے

    محفل‌ دل فگاراں بھی اک لفظ ہے

    میں بھی اک لفظ ہوں

    تو بھی اک لفظ ہے

    آ کہ لفظوں کی صورت فضاؤں میں مل کر بکھر جائیں ہم

    اک نیا لفظ تخلیق کر جائیں ہم

    آ کہ مر جائیں ہم

    مآخذ:

    • Book : Kulliyat-e-mohsin (Pg. 524)
    • Author : Mohsin Naqvi
    • مطبع : Mavra Publishers (2010)
    • اشاعت : 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY