ایک نڈھال نظم

سدریٰ افضل

ایک نڈھال نظم

سدریٰ افضل

MORE BYسدریٰ افضل

    تالیوں کی گونج

    زائل ہو چکی

    حال خالی ہو چکا

    داد کے بکسے الٹ کر چل دئے

    لوگ میری چیختی نظموں کی

    بولی دے چکے

    میں جمع تفریق کی مد میں

    بنا ترتیب سانسوں کی

    گھٹن سے چور ہوں

    کاش دھرتی آسماں کی

    وسعتوں کو جانتی

    خواب میں پنہاں

    حقیقت کو حقیقت مانتی

    ہاں مگر

    ان داستانوں کا سکندر کون ہے

    کون ہے

    افتادگی کی ساعتوں کا ہم نوا

    کون ہے

    تفہیم کی تشنہ لبی کا راز داں

    کون ہے

    کوئی نہیں

    وہ جو آئے تھے

    وہ آ کر جا چکے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY