ایک پرانا شہر

مخمور سعیدی

ایک پرانا شہر

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    مہر بہ لب ویران دریچے دروازے سنسان

    دور پہاڑوں کی چوٹی پر شاہی گورستان

    نیم کی شاخوں میں الجھی ہے کنکوے کی کانپ

    دیواروں پر رینگ رہا ہے شکستگی کا سانپ

    سڑکیں رہگیروں پر ڈالیں ٹھنڈی سرد نگاہ

    شرم عریانی سے چپ ہے بوڑھی شہر پناہ

    وقت کے قدموں کی آہٹ دیتی ہے سنائی ایسے

    سناٹے میں بھٹک رہی ہوں بیتی صدیاں جیسے

    اک اک لمحہ ڈھونڈ رہا ہے کھوئی ہوئی رعنائی

    دوڑ رہا ہے پیچھے کو با وصف شکستہ پائی

    راہ میں لیکن کچھ دیواریں آن کھڑی ہوئی ہیں

    دیواریں جن پر ننگی سنگینیں گڑی ہوئی ہیں

    ان سے سر ٹکراتے لمحوں کے یہ پگلے سائے

    مملکت فردا کا رستہ کون انہیں دکھلائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ek purana shahr - Makhmoor saeedi نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY