فینٹیسی

ساقی فاروقی

فینٹیسی

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    رات جمائیاں لے رہی ہے

    وصل کی سیپی جسم سے

    گہر پھوٹ رہے ہیں

    ایک اجنبی لڑکی

    آنکھوں میں آنکھیں ڈالے

    ننگی اور اکڑوں بیٹھی ہوئی ہے

    وہ چمن کی آن ہے

    اور جان اس کی

    رات کی رانی میں رہتی ہے

    سوچ رہا ہوں

    میں اس کی الماری میں

    اپنے آپ کو تہہ کر کے رکھ دوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY