فکر

اسرار الحق مجاز

فکر

اسرار الحق مجاز

MORE BY اسرار الحق مجاز

    نہیں ہر چند کسی گمشدہ جنت کی تلاش

    اک نہ اک خلد طرب ناک کا ارماں ہے ضرور

    بزم دو شنبہ کی حسرت تو نہیں ہے مجھ کو

    میری نظروں میں کوئی اور شبستاں ہے ضرور

    مٹ کے برباد جہاں ہو کے سبھی کچھ کھو کے

    بات کیا ہے کہ زیاں کا کوئی احساس نہیں

    کار فرما ہے کوئی تازہ جنون تعمیر

    دل مضطر ابھی اماجگۂ یاس نہیں

    تازہ دم بھی ہوں مگر پھر یہ تقاضا کیوں ہے

    ہاتھ رکھ دے مرے ماتھے پہ کوئی زہرہ جبیں

    ایک آغوش حسیں شوق کی معراج ہے کیا

    کیا یہی ہے اثر نالۂ دل ہائے حزیں

    مہ وشوں کا طرب انگیز تبسم کیا ہے

    ہے تو سب کچھ یہ مگر خواب اثر کیوں ہو جائے

    حسن کی جلوہ گہہ ناز کا افسوں تسلیم

    یہی قرباں گۂ ارباب نظر کیوں ہو جائے

    میں نے سوچا تھا کہ دشوار ہے منزل اپنی

    اک حسیں بازوے سیمیں کا سہارا بھی تو ہے

    دشت ظلمات سے آخر کو گزرنا ہے مجھے

    کوئی رخشندہ و تابندہ ستارہ بھی تو ہے

    آگ کو کس نے گلستاں نہ بنانا چاہا

    جل بجھے کتنے خلیل آگ گلستاں نہ بنی

    ٹوٹ جانا در زنداں کا تو دشوار نہ تھا

    خود زلیخا ہی رفیق مہ کنعاں نہ بنی

    بہ ایں انعام وفا اف یہ تقاضائے حیات

    زندگی وقف غم خاک نشیناں کر دے

    خون دل کی کوئی قیمت جو نہیں ہے تو نہ ہو

    خون دل نذر چمن بندئ دوراں کر دے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    Fikr - asrar ul haq majaz نعمان شوق

    مآخذ:

    • Book : Kulliyaat-e-Majaz (Pg. 180)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY