غالبؔ کا پوسٹ مارٹم

نشتر امروہوی

غالبؔ کا پوسٹ مارٹم

نشتر امروہوی

MORE BYنشتر امروہوی

    ایک دن غالبؔ کے پڑھ کر شعر میری اہلیہ

    مجھ سے بولی آپ تو کہتے تھے ان کو اولیا

    عاشق بنت عنب کو آپ کہتے ہیں ولی

    فاقہ مستی میں بھی ہر دم کر رہا ہے مے کشی

    پوجنے سے مہ جبینوں کے یہ باز آتا نہیں

    اور پھر کافر کہے جانے سے شرماتا نہیں

    کوئی بھی مہوش اکیلے میں اگر آ جائے ہاتھ

    چھیڑخوانی کر دیا کرتا تھا اکثر اس کے ساتھ

    بد گمانی کا اگر محبوب کی ہوتا نہ ڈر

    اس کے پیروں کا وہ بوسہ لیتا رہتا رات بھر

    کوئی رکھتا تھا اگر اس سے ذرا شرم و حجاب

    رعب دکھلانے کو اس سے کہہ دیا کرتے جناب

    ''ہم سے کھل جاؤ بوقت مہ پرستی ایک دن''

    ''ورنہ ہم چھیڑیں گے رکھ کر عذر مستی ایک دن''

    گر کسی مہمان کے آنے کی ہوتی تھی خبر

    بوریا تک بھی نہیں ہوتا تھا اس ننگے کے گھر

    اس لئے چھائی ہوئی تھی اس کے گھر میں مفلسی

    کل کے ڈر سے آج پینے میں نہ کرتا تھا کمی

    مے کشی کو گر کوئی ساقی نہیں دیتا تھا جام

    اوک سے پی کر ہی وہ اپنا چلا لیتا تھا کام

    مرتے مرتے بھی شراب اس کی نہ ہو پائی تھی کم

    جام کو تکتا رہا جب تک رہا آنکھوں میں دم

    اس کے اس کردار پر مجھ سے نہ کرنا گفتگو

    خاک میں جس نے ملا دی خاندانی آبرو

    اس قدر پہنچے ہوئے شاعر کا یہ کردار ہے

    شعر کہنا چھوڑ دیجے شاعری بیکار ہے

    اس سے پہلے کہ مرا برباد ہو جائے یہ گھر

    آپ بس گھر میں رہیں شعر و ادب کو چھوڑ کر

    مے کشی اور آپ ہوں مطلوب و طالب کی طرح

    سوچتی ہوں آپ ہو جائیں نہ غالبؔ کی طرح

    مآخذ
    • کتاب : Post Martum (Pg. 92)
    • Author : Nashtar Amrohvi
    • مطبع : M.R. Publications (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY