غالبؔ

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    تم جو آ جاؤ آج دلی میں

    خود کو پاؤ گے اجنبی کی طرح

    تم پھرو گے بھٹکتے رستوں میں

    ایک بے چہرہ زندگی کی طرح

    دن ہے دست خسیس کی مانند

    رات ہے دامن تہی کی طرح

    پنجۂ زر گری و زر گیری

    عام ہے رسم رہزنی کی طرح

    آج ہر میکدے میں ہے کہرام

    ہر گلی ہے تری گلی کی طرح

    وہ زباں جس کا نام ہے اردو

    اٹھ نہ جائے کہیں خوشی کی طرح

    ہم زباں کچھ ادھر ادھر سائے

    نظر آئیں گے آدمی کی طرح

    تم تھے اپنی شکست کی آواز

    آج سب چپ ہیں منصفی کی طرح

    آ رہی ہے ندا بہاروں سے

    ایک گمنام روشنی کی طرح

    اس اندھیرے میں اک روپہلی لکیر

    ایک آواز حق نبی کی طرح!

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مخدومؔ محی الدین

    مخدومؔ محی الدین

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Makhdum Muhi-ud-din (Pg. 237)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY