روح دیکھی ہے کبھی!

گلزار

روح دیکھی ہے کبھی!

گلزار

MORE BYگلزار

    روح دیکھی ہے؟

    کبھی روح کو محسوس کیا ہے؟

    جاگتے جیتے ہوئے دودھیا کہرے سے لپٹ کر

    سانس لیتے ہوئے اس کہرے کو محسوس کیا ہے؟

    یا شکارے میں کسی جھیل پہ جب رات بسر ہو

    اور پانی کے چھپاکوں میں بجا کرتی ہیں ٹلیاں

    سبکیاں لیتی ہواؤں کے بھی بین سنے ہیں؟

    چودھویں رات کے برفاب سے اک چاند کو جب

    ڈھیر سے سائے پکڑنے کے لیے بھاگتے ہیں

    تم نے ساحل پہ کھڑے گرجے کی دیوار سے لگ کر

    اپنی گہناتی ہوئی کوکھ کو محسوس کیا ہے؟

    جسم سو بار جلے تب بھی وہی مٹی ہے

    روح اک بار جلے گی تو وہ کندن ہوگی

    روح دیکھی ہے، کبھی روح کو محسوس کیا ہے؟

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    گلزار

    گلزار

    مآخذ:

    • کتاب : Chand Pukhraj Ka (Pg. 83)
    • Author : Gulzar
    • مطبع : Roopa And Company (1995)
    • اشاعت : 1995

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY