ہمیشہ قتل ہو جاتا ہوں میں

جون ایلیا

ہمیشہ قتل ہو جاتا ہوں میں

جون ایلیا

MORE BY جون ایلیا

    بساط زندگی تو ہر گھڑی بچھتی ہے اٹھتی ہے

    یہاں پر جتنے خانے جتنے گھر ہیں

    سارے

    خوشیاں اور غم انعام کرتے ہیں

    یہاں پر سارے مہرے

    اپنی اپنی چال چلتے ہیں

    کبھی محصور ہوتے ہیں کبھی آگے نکلتے ہیں

    یہاں پر شہہ بھی پڑتی ہے

    یہاں پر مات ہوتی ہے

    کبھی اک چال ٹلتی ہے

    کبھی بازی پلٹتی ہے

    یہاں پر سارے مہرے اپنی اپنی چال چلتے ہیں

    مگر میں وہ پیادہ ہوں

    جو ہر گھر میں

    کبھی اس شہہ سے پہلے اور کبھی اس مات سے پہلے

    کبھی اک برد سے پہلے کبھی آفات سے پہلے

    ہمیشہ قتل ہو جاتا ہے

    مآخذ:

    • Book : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 426)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY