ہولی

MORE BYعادل اسیر دہلوی

    ہولی جب بھی آئے

    پیار کی خوشیاں لائے

    رنگوں کے کھیلوں میں

    مستی سی چھا جائے

    خوش ہیں دادی نانی

    بچوں کی نادانی

    پچکاری میں بھر کر

    پھینک رہے ہیں پانی

    رنگ رنگیلی ہولی

    چھیل چھبیلی ہولی

    بچے ہوں یا بوڑھے

    سب کی سہیلی ہولی

    پانی کے غبارے

    رنگوں کے نظارے

    برا نہ مانو بھیا

    لگتے ہیں کیا پیارے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY