اک کہانی سنوگی

محمد اعظم

اک کہانی سنوگی

محمد اعظم

MORE BY محمد اعظم

    رات

    جنگل گھنا

    وہ گرجتی ہوا

    دو درختوں کی کونپل بھری ڈالیاں

    ایک سے ایک اس طرح

    ٹکرا گئیں

    جیسے برسوں جدائی میں جلتے بدن

    بات پوری سنو تم تو شرما گئیں

    آگ پیدا ہوئی

    پیڑ جلنے لگے

    شور برپا ہوا

    ہر طرف دھواں ہی دھواں

    اور پھر

    نہ پوچھو کہ پھر کیا ہوا

    راکھ کے ڈھیر کو

    اب مناسب نہیں چھیڑنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY