اک لڑکی

ولی اللہ ولی

اک لڑکی

ولی اللہ ولی

MORE BYولی اللہ ولی

    یہ دیوانی سی اک لڑکی

    حسیں بھی دل ربا بھی ہے

    ابھی معصوم ہے لیکن

    وفا سے آشنا بھی ہے

    مرے گھر کی ہیں دیواریں

    اسی کے رنگ سے روشن

    اسی کے دم سے پاکیزہ

    مری امید کا آنگن

    جبیں اس کی سحر جیسی

    اذاں دیتی ہوئی آنکھیں

    نظر کا امتحاں لیتی

    شب تاریک سی زلفیں

    نگاہیں زندگی جیسی

    ادائیں چاندنی جیسی

    وفا اس کی مری خاطر

    عصائے موسوی جیسی

    تقدس حور کے جیسا

    سراپا نور کے جیسا

    مکمل حسن ہے اس کا

    مرے دستور کے جیسا

    نگاہوں کے لیے میری

    یہ ہے تنویر مستقبل

    یہ صبح نو کی منزل ہے

    یہ ہے تصویر مستقبل

    ہر اک انداز ہے اس کا

    دھنک منظر کا ہمسایہ

    ولیؔ یہ لاڈلی بیٹی

    مری ہستی کا سرمایہ

    یہ دیوانی تو ہے لیکن

    یہی دانش نشاں ہوگی

    اسی کی گود میں پل کر

    نئی دنیا جواں ہوگی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ولی اللہ ولی

    ولی اللہ ولی

    RECITATIONS

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    Nazm_Ek ladki نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY