امتحان سے پہلے

شوکت پردیسی

امتحان سے پہلے

شوکت پردیسی

MORE BYشوکت پردیسی

    شان کی فکر ہے نہ آن کی ہے

    اب مجھے فکر امتحان کی ہے

    پڑھ رہا ہوں کتاب محنت سے

    ہوں گا میں کامیاب محنت سے

    فرسٹ آنا ہے مجھ کو اب کی بار

    کچھ دکھانا ہے مجھ کو اب کی بار

    اپنی محنت کی لاج رکھنی ہے

    کل کی بنیاد آج رکھنی ہے

    فوری کر لوں گا میں اگر محنت

    امتحاں سے نہ ہوگی کچھ وحشت

    سال بھر میں نے کی ہے تیاری

    مجھ پہ کیوں کوئی خوف ہو طاری

    کام مشکل کا کر لیا میں نے

    کوئی الجھن نہیں مرے آگے

    مجھ کو اب سال بھر کی محنت کا

    سامنے رکھنا ہے بس اک خاکہ

    ہر سبق کا شمار کرنا ہے

    سب کو پھر ایک بار پڑھنا ہے

    کچھ جو بھولا ہو یاد ہو جائے

    کام سے دل بھی شاد ہو جائے

    کوئی لغزش اگر نہیں ہوگی

    بھول بھی وقت پر نہیں ہوگی

    رفتہ رفتہ جو کام ہوتا ہے

    اس میں کچھ انتظام ہوتا ہے

    کوئی الجھن نہ بے قراری ہے

    پھر بھی اک کیفیت سی طاری ہے

    اس سے فرصت ملے گی دھیان کے بعد

    چین آئے گا امتحان کے بعد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے