انتقام

ن م راشد

انتقام

ن م راشد

MORE BY ن م راشد

    اس کا چہرہ، اس کے خد و خال یاد آتے نہیں

    اک شبستاں یاد ہے

    اک برہنہ جسم آتشداں کے پاس

    فرش پر قالین، قالینوں پہ سیج

    دھات اور پتھر کے بت

    گوشۂ دیوار میں ہنستے ہوئے!

    اور آتشداں میں انگاروں کا شور

    ان بتوں کی بے حسی پر خشمگیں

    اجلی اجلی اونچی دیواروں پہ عکس

    ان فرنگی حاکموں کی یادگار

    جن کی تلواروں نے رکھا تھا یہاں

    سنگ بنیاد فرنگ!

    اس کا چہرہ اس کے خد و خال یاد آتے نہیں

    اک برہنہ جسم اب تک یاد ہے

    اجنبی عورت کا جسم،

    میرے'' ہونٹوں'' نے لیا تھا رات بھر

    جس سے ارباب وطن کی بے حسی کا انتقام

    وہ برہنہ جسم اب تک یاد ہے!

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    انتقام نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites