جاروب کش

مجید امجد

جاروب کش

مجید امجد

MORE BY مجید امجد

    آسمانوں کے تلے سبز و خنک گوشوں میں

    کوئی ہوگا جسے اک ساعت راحت مل جائے

    یہ گھڑی تیرے مقدر میں نہیں ہے نہ سہی

    آسمانوں کے تلے تلخ و سیہ راہوں پر

    اتنے غم بکھرے پڑے ہیں کہ اگر تو چن لے

    کوئی اک غم تری قسمت کو بدل سکتا ہے

    آسمانوں کے تلے تلخ و سیہ راہوں پر

    تو اگر دیکھے تو خوشیوں کی گریزاں سرحد

    سوز یک غم سے شکیب غم دیگر تک ہے

    زندگی قہر سہی زہر سہی کچھ بھی سہی

    آسمانوں کے تلے تلخ و سیہ لمحوں میں

    جرعۂ سم کے لیے عفت لب لازم ہے

    اور تو ہے کہ ترے جسم کا سایہ بھی نجس

    تو اگر چاہے تو ان تلخ و سیہ راہوں پر

    جا بجا اتنی تڑپتی ہوئی دنیاؤں میں

    اتنے غم بکھرے پڑے ہیں کہ جنہیں تیری حیات

    قوت یک شب کے تقدس میں سمو سکتی ہے

    کاش تو حیلۂ جاروب کے پر نوچ سکے

    کاش تو سوچ سکے سوچ سکے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites