’’جب ترسیل بٹن تک پہنچی‘‘

حنیف ترین

’’جب ترسیل بٹن تک پہنچی‘‘

حنیف ترین

MORE BYحنیف ترین

    کل، ترا نامہ

    جو ملتا تھا ہمیں

    اس کے الفاظ تلے

    مدتیں، معنی کی تشریحوں میں

    لطف کا سیل رواں رہتا تھا

    راتیں بستر پہ

    نشہ خواب کا رکھ دیتی تھیں

    عطر میں ڈوبی ہوئی دھوپ کی پیمائش پر

    چاندنی ،نیند کو لوری کی تھپک دیتی تھی

    ذہن میں صبح و مسا

    اک عجب فرحت نو رستہ سفر کرتی تھی

    لیکن اب۔۔۔ قربتیں ہیں بہم

    سماعت کو ۔۔۔مگر۔۔

    فون کی گھنٹی کو سننے کو ترستی خواہش

    منقطع رابطہ پانے کے لیے کوشاں ہے

    انگلیاں رہتی ہیں

    ایک ایک بٹن پر رقصاں

    یہی معمول ہے مدت سے

    مگر، ٹیلیفون

    ایک خاموش صدا دیتا ہے

    سلسلہ لمحوں کا

    صدیوں سا بنا دیتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY