جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

اختر شیرانی

جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    وہ اس وادی کی شہزادی تھی اور شاہانہ رہتی تھی

    کنول کا پھول تھی سنسار سے بیگانہ رہتی تھی

    نظر سے دور مثل نکہت مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہ رہتی تھی

    انہی صحراؤں میں وہ اپنے گلے کو چراتی تھی

    انہیں چشموں پہ وہ ہر روز منہ دھونے کو آتی تھی

    انہی ٹیلوں کے دامن میں وہ آزادانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    کھجوروں کے تلے وہ جو کھنڈر سے جھلملاتے ہیں

    یہ سب ریحانہؔ کے معصوم افسانے سناتے ہیں

    وہ ان کھنڈروں میں اک دن صورت افسانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    مرے ہم دم یہ نخلستان اک دن اس کا مسکن تھا

    اسی کے خرمئی آغوش میں اس کا نشیمن تھا

    اسی شاداب وادی میں وہ بے باکانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہ پھولوں کی حسیں آبادیاں کاشانہ تھیں اس کا

    وہ اک بت تھی یہ ساری وادیاں بت خانہ تھیں اس کا

    وہ اس فردوس وجد و رقص میں مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    تباہی کی ہوا اس خاک رنگیں تک نہ آئی تھی

    یہ وہ خطہ تھا جس میں نو بہاروں کی خدائی تھی

    وہ اس خطے میں مثل سبزۂ بیگانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    اسی ویرانہ میں اک دن بہشتیں لہلہاتی تھیں

    گھٹائیں گھر کے آتی تھیں ہوائیں مسکراتی تھیں

    کہ وہ بن کر بہار جنت ویرانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہ ویرانہ گزر جس میں نہیں ہے کاروانوں کا

    جہاں ملتا نہیں نام و نشاں تک ساربانوں کا

    اسی ویرانے میں اک دن مری ریحانہؔ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہیں آباد تھی اک دن مرے افکار کی ملکہ

    مرے جذبات کی دیوی مرے اشعار کی ملکہ

    وہ ملکہ جو برنگ عظمت شاہانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہ رہتی تھی

    صبا شاخوں میں نخلستاں کی جس دم سرسراتی ہے

    مجھے ہر لہر سے ریحانہؔ کی آواز آتی ہے

    یہیں ریحانہؔ رہتی ہے یہیں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    فضائیں گونجتی ہیں اب بھی ان وحشی ترانوں سے

    سنو آواز سی آتی ہے ان خاکی چٹانوں سے

    کہ جن میں وہ برنگ نغمۂ بیگانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    مرے ہم دم جنون شوق کا اظہار کرنے دے

    مجھے اس دشت کی اک اک کلی سے پیار کرنے دے

    جہاں اک دن وہ مثل غنچۂ مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    بہ رب کعبہ اس کی یاد میں عمریں گنوا دوں گا

    میں اس وادی کے ذرے ذرے پر سجدے بچھا دوں گا

    جہاں وہ جان کعبہ عظمت بت خانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    وہ اس ٹیلے پر اکثر عاشقانہ گیت گاتی تھی

    پرانے سورماؤں کے فسانے گنگناتی تھی

    یہیں پر منتظر میری وہ بیتابانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    کھجوروں کے حسیں سائے زمیں پر لہلہاتے تھے

    ستارے جگمگاتے تھے شگوفے کھلکھلاتے تھے

    فضائیں منتشر اک نکہت مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہیں بستی تھی اے ہم دم مرے رومان کی بستی

    مرے افسانوں کی دنیا مرے وجدان کی بستی

    یہیں ریحانہؔ بستی تھی یہیں ریحانہؔ بستی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    شمیم زلف سے اس کی مہک جاتی تھی کل وادی

    نگاہ مست سے اس کی بہک جاتی تھی کل وادی

    ہوائیں پرفشاں روح مے و مے خانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    وہ گیسوئے پریشاں یا گھٹائیں رقص کرتی تھیں

    فضائیں وجد کرتی تھیں ہوائیں رقص کرتی تھیں

    وہ اس فردوس وجد و رقص میں مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    گداز عشق سے لبریز تھا قلب حزیں اس کا

    مگر آئینہ دار شرم تھا روئے حسیں اس کا

    خموشی میں چھپائے نغمۂ مستانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    اسے پھولوں نے میری یاد میں بیتاب دیکھا ہے

    ستاروں کی نظر نے رات بھر بے خواب دیکھا ہے

    وہ شمع حسن تھی پر صورت پروانہ رہتی تھی

    یہی وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہیں ہم رنگ گلہائے حسیں رہتی تھی ریحانہؔ

    مثال حور فردوس بریں رہتی تھی ریحانہؔ

    یہیں ریحانہؔ رہتی تھی یہیں ریحانہؔ رہتی تھی

    یہیں وادی ہے وہ ہم دم جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    پیام درد دل اخترؔ دیئے جاتا ہوں وادی کو

    سلام رخصت غمگیں کئے جاتا ہوں وادی کو

    سلام اے وادئ ویراں جہاں ریحانہؔ رہتی تھی

    مآخذ:

    • کتاب : kulliyat-e-akhtar shirani (Pg. 148)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY