جنگ

MORE BYچندر بھان خیال

    جنگ دھرتی پہ ستاروں کے لیے جاری ہے

    حیف صد حیف کہ ہر شے پہ جنوں طاری ہے

    کیا ہمیں اپنے مکانوں میں نہ رہنے دے گی

    بستیاں دور خلاؤں میں بسانے کی لگن

    جنگ در جنگ سلگتے ہیں صداؤں کے بدن

    سبز راتوں کے سیہ خون سے تر ہے دامن

    آسماں آگ نگلنے پہ ہے مجبور تو پھر

    ہر دشا برف کی مانند پگھل جائے گی

    زندگی ہاتھ سے دنیا کے نکل جائے گی

    ساری تعمیر تباہی میں بدل جائے گی

    کوئی تو اپنی قباؤں کو بنا کر پرچم

    نعرۂ امن ہواؤں کی جبیں پر لکھ دے

    مأخذ :
    • کتاب : azadi ke bad urdu nazm (Pg. 675)
    • Author : shamim hanfi and mazhar mahdi
    • مطبع : qaumi council bara-e-farogh urdu (2005)
    • اشاعت : 2005

    related content

    نظم

    جنگ کے دنوں میں

    جنگ کے دنوں میں

    ذیشان ساحل
    نظم

    خدائے برتر تری زمیں پر زمیں کی خاطر یہ جنگ کیوں ہے

    خدائے برتر تری زمیں پر زمیں کی خاطر یہ جنگ کیوں ہے

    ساحر لدھیانوی
    نظم

    امن کی ٹھنڈی چھاؤں

    چھوڑو بھی یہ جنگ کی باتیں

    سیدہ فرحت

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے