Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

جھوٹی ترقی

دیدار اکبرپوری

جھوٹی ترقی

دیدار اکبرپوری

MORE BYدیدار اکبرپوری

    یہ شفق فام زرد رو افراد

    سالہا سال سے اسیر حیات

    زندہ رہنے کی کچھ خوشی ہے انہیں

    نہ ہی مرنے کا کچھ ذرا بھی ملال

    یہ وہ جاں دار ہیں کہ جن کے لئے

    لفظ آسودگی بہشت خیال

    کتنے بوسیدہ خال و خد ان کے

    جسم بس ہڈیوں کا ڈھانچہ ہے

    روح ورثے میں جو ملی ان کو

    ایک نا معتبر اثاثہ ہے

    کیا کیا ہم نے اتنی صدیوں میں

    کیا؟ ترقی! جو ایک دھوکہ ہے

    ایک مفلس غریب بیچارہ

    کل بھی بھوکا تھا اب بھی بھوکا ہے

    لوگ اب بھی گزشتہ کی مانند

    دفن ہیں اپنی خواہشوں کے تلے

    یہ ترقی ہے ایک کذب محض

    اتنی صدیوں میں ہم نہیں بدلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے