کچے رستوں سے

شہریار

کچے رستوں سے

شہریار

MORE BYشہریار

    جو کچے رستوں سے پکی سڑکوں کا رخ کیا تھا

    کھڑاؤں اپنی اتار دیتے

    بدن کو کپڑوں سے ڈھانپ لیتے

    تمہاری سیراب پنڈلیوں پر نشان جتنے ہیں کہہ رہے ہیں

    کہ تم نے راتوں کو رات سمجھا

    ہر ایک موسم میں اس کی نسبت سے پھل اگائے

    بدن ضرورت غذا ہمیشہ تمہیں ملی ہے

    نہ جانے افتاد کیا پڑی ہے

    جو کچے رستوں سے پکی سڑکوں کا رخ کیا ہے

    مآخذ
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 519)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY