کندھے جھک جاتے ہیں

گلزار

کندھے جھک جاتے ہیں

گلزار

MORE BYگلزار

    کندھے جھک جاتے ہیں جب بوجھ سے اس لمبے سفر کے

    ہانپ جاتا ہوں میں جب چڑھتے ہوئے تیز چڑھانیں

    سانسیں رہ جاتی ہیں جب سینے میں اک گچھا سا ہو کر

    اور لگتا ہے کہ دم ٹوٹ ہی جائے گا یہیں پر

    ایک ننھی سی میری نظم سامنے آ کر

    مجھ سے کہتی ہے مرا ہاتھ پکڑ کر، میرے شاعر

    لا، میرے کندھوں پر رکھ دے، میں ترا بوجھ اٹھا لوں!

    مأخذ :
    • کتاب : Yaar Julahe (Pg. 82)
    • Author : Gulzar
    • مطبع : Vani prakashan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے