کراچی

انجم اعظمی

کراچی

انجم اعظمی

MORE BYانجم اعظمی

    INTERESTING FACT

    (کراچی 60 ؁ء)

    اک ہجوم بے کراں

    شہر کی سڑکوں پہ گلیوں میں رواں

    دن کے ہنگاموں کو رکھتا ہے جواں

    ایک جانب سلسلہ ہائے عمارات بلند

    جن کے مینارے فلک سے مل گئے ہیں جا بجا

    شہر کی سطوت کے عظمت کے نشاں

    دوسری جانب ہے بوسیدہ مکانوں کی قطار

    مدتوں سے گردش لیل و نہار

    ہے اس آبادی میں جن کی نوحہ خواں

    اے کراچی اے نگار جانستاں

    گو ترے رخ پر کھلی ہے چاندنی

    تیری گلیوں میں اندھیری رات ہے

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY