خالی بورے میں زخمی بلا

ساقی فاروقی

خالی بورے میں زخمی بلا

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    جان محمد خان

    سفر آسان نہیں

    دھان کے اس خالی بورے میں

    جان الجھتی ہے

    پٹ سن کی مضبوط سلاخیں دل میں گڑی ہیں

    اور آنکھوں کے زرد کٹوروں میں

    چاند کے سکے چھن چھن گرتے ہیں

    اور بدن میں رات پھیلتی جاتی ہے۔۔۔

    آج تمہاری ننگی پیٹھ پر

    آگ جلائے کون

    انگارے دہکائے کون

    جد و جہد کے

    خونیں پھول کھلائے کون

    میرے شعلہ گر پنجوں میں جان نہیں

    آج سفر آسان نہیں

    تھوڑی دیر میں یہ پگڈنڈی

    ٹوٹ کے اک گندے تالاب میں گر جائے گی

    میں اپنے تابوت کی تنہائی سے لپٹ کر

    سو جاؤں گا

    پانی پانی ہو جاؤں گا

    اور تمہیں آگے جانا...

    ۔۔۔اک گہری نیند میں چلتے جانا ہے

    اور تمہیں اس نظر نہ آنے والے بورے۔۔۔

    ۔۔۔اپنے خالی بورے کی پہچان نہیں

    جان محمد خان

    سفر آسان نہیں

    An Injured Tomcat in an Empty Sack

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خالی بورے میں زخمی بلا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY