خوف کا صحرا

شاذ تمکنت

خوف کا صحرا

شاذ تمکنت

MORE BY شاذ تمکنت

    کیا ہوا شوق فضول

    کیا ہوئی جرأت رندانہ مری

    مجھ پہ کیوں ہنستی ہے تعمیر صنم خانہ مری

    پھر کوئی باد جنوں تیز کرے

    آگہی ہے کہ چراغوں کو جلاتی ہی چلی جاتی ہے

    دور تک خوف کا صحرا نظر آتا ہے مجھے

    اور اب سوچتا ہوں فکر کی اس منزل میں

    عشق کیوں عقل کی دیوار سے سر ٹکرا کر

    اپنے ماتھے سے لہو پونچھ کے ہنس پڑتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY