کھیل رتوں کا

شفیق فاطمہ شعریٰ

کھیل رتوں کا

شفیق فاطمہ شعریٰ

MORE BYشفیق فاطمہ شعریٰ

    اک رت آئے اک جائے

    ہم رت رت چونکیں

    کروٹ بدلیں سو جائیں

    معصوم گلاب پھواریں

    بے لفظ تحیر

    بادل چمکیلے سفینے

    میداں ٹھہرا ہوا پانی

    سائے وہ جزیرے دھانی

    اجلی شادابی آنکھیں

    بھونرا تو ہنسی فوارہ

    پھر دھول دھوئیں کا پردہ

    آنا جانا چونکانا

    اک کھیل رتوں کا

    اپنی نظروں سے اوجھل

    اک سیارہ دل اپنا

    انجانے کہر میں ڈوبا

    عریاں پر نم کا

    شفاف رقیق اجالا

    وہ گھلتے پگھلتے کھنڈر

    وہ سناٹا اس میں پگھلتا

    دیکھا تو قلم بھی اپنا

    اک دن پگھلا پگھلا تھا

    شعریٰ شعریٰ شاید اک

    طائر تھا جو چہکارا

    دھندلے دھندلے غاروں میں

    وہ گھومتے پھرتے رستے

    آواز کے لہرے کو پھر

    باہر لے آئے

    تپتے سورج کے نیچے

    سورج کے نیچے جھرنا

    ہمہمہ نہ تھمنے والا

    روشن پانی کا

    بوچھار کا شور ہوا میں

    اڑتی ہوئی جگ مگ ٹھنڈی

    سیمابی چھلکی چھلکی

    سورج کے نیچے جھرنا

    کرنوں کے لیے آئینہ

    پتھر کے سراپا

    ان کی

    پتھر خاموشی

    اک چکنا چور چھناکا

    شیشے کا ظرف تھا کوئی

    کافر کافر سرگوشی

    برہم سرگرم ہوا کی

    کافر کافر وہ گچھے

    پھولوں کے پھولوں کے خزانے

    اونچی شاخوں سے جھکائے

    کس نے

    کیا تنہا تم نے

    کافر کافر سرگوشی

    باتیں اور کتنی باتیں

    جاری تھیں کتنے موسم

    بدلے کتنی تقدیریں

    تحریریں ان کے ابھرنے

    مٹنے میں اپنا ابھرنا

    مٹنا

    مٹتے مٹتے بھی

    ہم فائق سب سے کہنا

    کہہ کر کھل اٹھنا

    اب اک سپنا لگتا ہے

    رت کاجل پگھلا پگھلا

    رت گہرا جل بسراوا

    اک خاک بسر آنگن سے

    اگتا ہوا تارا نغمہ

    جینے کا جواز ہے کس کا

    اپنا نہیں پھر بھی کتنا

    اپنا لگتا ہے

    اس پر سر دھنتے دھنتے

    مٹ جائے یاد نہ آئے

    پیرایہ ما و شما کا

    یہ کون سی رت ہے

    کس سے

    پوچھیں

    کیا نام ہے اس کا

    مأخذ :
    • کتاب : Silsila-e-makalmat (Pg. 27)
    • Author : Shafique Fatma Shora
    • مطبع : Educational Publishing House (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY