کھوکھلے برتن کے ہونٹ

اسلم عمادی

کھوکھلے برتن کے ہونٹ

اسلم عمادی

MORE BYاسلم عمادی

    کھوکھلے برتن کے ہونٹ

    صدا کے کھوکھلے بت پر

    وہ اپنی انگلیاں گھستے رہیں گے

    اندھیرے نرخرے سے

    بس ہوا کی رفت و آمد کا نشاں

    معلوم ہوتا ہے

    زباں پر سبز دھبے پڑتے جائیں گے

    چمکتے سبز دھبوں میں ٹھٹھرتے آئینے نیلی دعاؤں کے

    کوئی یہ ان سے کہہ دو

    کہ آوازیں کھڑکنے کے سوا یا

    دھڑدھڑانے شور اٹھنے کے سوا

    تازہ نہیں ہوتیں

    صدا کا دیوتا

    اپنے پرندے لے کے واپس جا چکا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کھوکھلے برتن کے ہونٹ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY