خدا جانتا ہے

صائمہ شمس

خدا جانتا ہے

صائمہ شمس

MORE BYصائمہ شمس

    یہ اشکوں کی حدت

    خدا جانتا ہے کہ کس جذبۂ نارسا کی ہے شدت

    ان اشکوں کے پیچھے

    چھپی داستانوں کے ہیں رنگ کتنے خدا جانتا ہے

    چمک میں ان اشکوں کی

    کتنی تمناؤں کے دیپ کی جھلملاہٹ خدا جانتا ہے

    روانی میں ان کی سفر در سفر مسافت کا اک سلسلہ ہے

    اور ان آنسوؤں میں کشش کا وہ ساماں

    جو بے کیف رشتوں کے بار گراں ہی کا اک مسئلہ ہے

    یہ آنسو جو یوں ڈھل رہے ہیں

    خدا جانتا ہے کہ کس ماندگی کا اشارہ بنیں گے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے