خوش آمدید

انجم اعظمی

خوش آمدید

انجم اعظمی

MORE BYانجم اعظمی

    INTERESTING FACT

    (کراچی 56ء ؁)

    آج اس بزم میں آئے ہو بڑی دھوم کے ساتھ

    بے خودی محو نظارہ ہے تمہاری خاطر

    یاد آتے ہیں وہ ایام جدائی ہم کو

    جنہیں ہنس ہنس کے گزارہ ہے تمہاری خاطر

    گو مع لطف سے خالی نہیں پندار جنوں

    یاں غم عشق کا یارا ہے تمہاری خاطر

    رنج اٹھانا تو کوئی بات نہیں ہے لیکن

    زہر پینا بھی گوارا ہے تمہاری خاطر

    ہار اور جیت کے مفہوم میں کیا رکھا ہے

    جیت کر بھی کوئی ہارا ہے تمہاری خاطر

    ترک شیراز ہو تم حافظ شیراز ہوں میں

    اب سمرقند و بخارا ہے تمہاری خاطر

    تم جو آئے ہو تو اس زیست کی لذت پا کر

    ہم نے عالم کو سنوارا ہے تمہاری خاطر

    آج ہم نے مہ و انجم کو بھی زحمت دی ہے

    آسمانوں سے اتارا ہے تمہاری خاطر

    لالہ و گل کو بہاروں کو سمن زاروں کو

    دیدہ و دل نے پکارا ہے تمہاری خاطر

    پھر یہاں شیشہ و ساغر سے چراغاں ہوگا

    پھر کوئی انجمن آرا ہے تمہاری خاطر

    مآخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY