لا زوال ہونے کا

شہریار

لا زوال ہونے کا

شہریار

MORE BYشہریار

    رات کی کھلی کھڑکی

    بند ہونے والی ہے

    چاند کے کٹورے میں

    اوس بھرنے والی ہے

    یہ عجب سفر اس کا

    اب تمام ہوتا ہے

    لا زوال ہونے کا

    دیکھو کیا بہانہ ہے

    کل بھی اک حقیقت تھا

    آج بھی فسانہ ہے

    آسمان کی جانب

    سب کے ہاتھ اٹھتے ہیں

    اس کے خون کی سرخی

    برگ و بار لائے گی

    بے نماز بندوں پر

    یعنی ان درندوں پر

    ہر قدم مصائب کا

    انتظار لائے گا

    مآخذ :
    • کتاب : sooraj ko nikalta dekhoon (Pg. 518)
    • Author : shaharyar
    • مطبع : educational book house (2013)
    • اشاعت : 2013

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY