ماحول

کیفی اعظمی

ماحول

کیفی اعظمی

MORE BY کیفی اعظمی

    طبیعت جبریہ تسکین سے گھبرائی جاتی ہے

    ہنسوں کیسے ہنسی کمبخت تو مرجھائی جاتی ہے

    بہت چمکا رہا ہوں خال و خط کو سعیٔ رنگیں سے

    مگر پژمردگی سی خال و خط پر چھائی جاتی ہے

    امیدوں کی تجلی خوب برسی شیشۂ دل پر

    مگر جو گرد تھی تہ میں وہ اب تک پائی جاتی ہے

    جوانی چھیڑتی ہے لاکھ خوابیدہ تمنا کو

    تمنا ہے کہ اس کو نیند ہی سی آئی جاتی ہے

    محبت کی نگوں ساری سے دل ڈوبا سا رہتا ہے

    محبت دل کی اضمحلال سے شرمائی جاتی ہے

    فضا کا سوگ اترا آ رہا ہے ظرف ہستی میں

    نگاہ شوق روح آرزو کجلائی جاتی ہے

    یہ رنگ مے نہیں ساقی جھلک ہے خوں شدہ دل کی

    جو اک دھندلی سی سرخی انکھڑیوں میں پائی جاتی ہے

    مرے مطرب نہ دے للّٰلہ مجھ کو دعوت نغمہ

    کہیں ساز غلامی پر غزل بھی گائی جاتی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites