میں بچ گئی ماں

زہرا نگاہ

میں بچ گئی ماں

زہرا نگاہ

MORE BY زہرا نگاہ

    میں بچ گئی ماں

    میں بچ گئی ماں

    ترے کچے لہو کی مہندی

    مرے پور پور میں رچ گئی ماں

    میں بچ گئی ماں

    گر میرے نقش ابھر آتے

    وہ پھر بھی لہو سے بھر جاتے

    مری آنکھیں روشن ہو جاتی تو

    تیزاب کا سرمہ لگ جاتا

    سٹے وٹے میں بٹ جاتی

    بے کاری میں کام آ جاتی

    ہر خواب ادھورا رہ جاتا

    مرا قد جو تھوڑا سا بڑھتا

    مرے باپ کا قد چھوٹا پڑتا

    مری چنری سر سے ڈھلک جاتی

    مرے بھائی کی پگڑی گر جاتی

    تری لوری سننے سے پہلے

    اپنی نیند میں سو گئی ماں

    انجان نگر سے آئی تھی

    انجان نگر میں کھو گئی ماں

    میں بچ گئی ماں

    میں بچ گئی ماں

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY