میں اسے واقف الفت نہ کروں

ن م راشد

میں اسے واقف الفت نہ کروں

ن م راشد

MORE BYن م راشد

    سوچتا ہوں کہ بہت سادہ و معصوم ہے وہ

    میں ابھی اس کو شناسائے محبت نہ کروں

    روح کو اس کی اسیر غم الفت نہ کروں

    اس کو رسوا نہ کروں وقف مصیبت نہ کروں

    سوچتا ہوں کہ ابھی رنج سے آزاد ہے وہ

    واقف درد نہیں خوگر آلام نہیں

    سحر عیش میں اس کی اثر شام نہیں

    زندگی اس کے لیے زہر بھرا جام نہیں

    سوچتا ہوں کہ محبت ہے جوانی کی خزاں

    اس نے دیکھا نہیں دنیا میں بہاروں کے سوا

    نکہت و نور سے لبریز نظاروں کے سوا

    سبزہ زاروں کے سوا اور ستاروں کے سوا

    سوچتا ہوں کہ غم دل نہ سناؤں اس کو

    سامنے اس کے کبھی راز کو عریاں نہ کروں

    خلش دل سے اسے دست و گریباں نہ کروں

    اس کے جذبات کو میں شعلہ بداماں نہ کروں

    سوچتا ہوں کہ جلا دے گی محبت اس کو

    وہ محبت کی بھلا تاب کہاں لائے گی

    خود تو وہ آتش جذبات میں جل جائے گی

    اور دنیا کو اس انجام پہ تڑپائے گی

    سوچتا ہوں کہ بہت سادہ و معصوم ہے وہ

    میں اسے واقف الفت نہ کروں

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 27)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY