میرے پیارے وطن

عرش ملسیانی

میرے پیارے وطن

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    گل پوش تیری وادیاں

    فرحت نشاں راحت رساں

    تیرے چمن زاروں پہ ہے

    گلزار جنت کا گماں

    ہر شاخ پھولوں کی چھڑی

    ہر نخل طوبیٰ ہے یہاں

    کوثر کے چشمے جا بجا

    تسنیم ہر آب رواں

    ہر برگ روح تازگی

    ہر پھول جان گلستاں

    ہر باغ باغ دلکشی

    ہر باغ باغ بے خزاں

    دل کش چراگاہیں تری

    ڈھوروں کے جن میں کارواں

    انجم صفت گلہائے نو

    ہر تختۂ گل آسماں

    نقش ثریا جا بجا

    ہر ہر روش اک کہکشاں

    تیری بہاریں دائمی

    تیری بہاریں جاوداں

    تجھ میں ہے روح زندگی

    پیہم رواں پیہم دواں

    دریا وہ تیرے تند خو

    جھیلیں وہ تیری بے کراں

    شام اودھ کے لب پہ ہے

    حسن ازل کی داستاں

    کہتی ہے راز سرمدی

    صبح بنارس کی زباں

    اڑتا ہے ہفت افلاک پر

    ان کارخانوں کا دھواں

    جن میں ہیں لاکھوں محنتی

    صنعت گری کے پاسباں

    تیری بنارس کی زری

    رشک حریر و پرنیاں

    بیدر کی فن کاری میں ہیں

    صنعت کی سب باریکیاں

    عظمت ترے اقبال کی

    تیرے پہاڑوں سے عیاں

    دریاؤں کا پانی، تری

    تقدیس کا اندازہ داں

    کیا بھارتیندوؔ نے کیا

    گنگا کی لہروں کا بیاں

    اقبالؔ اور چکبستؔ ہیں

    عظمت کے تیری نغمہ خواں

    جوشؔ و فراقؔ و پنتؔ ہیں

    تیرے ادب کے ترجماں

    تلسیؔ و خسروؔ ہیں تیری

    تعریف میں رطب اللساں

    گاتے ہیں نغمہ مل کے سب

    اونچا رہے تیرا نشاں

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    تیرے نظاروں کے نگیں

    دنیا کی خاتم میں نہیں

    سارے جہاں میں منتخب

    کشمیر کی ارض حسیں

    فطرت کا رنگیں معجزہ

    فردوس بر روئے زمیں

    فردوس بر روئے زمیں

    ہاں ہاں ہمیں است و ہمیں

    سر سبز جس کے دشت ہیں

    جس کے جبل ہیں سرمگیں

    میوے بہ کثرت ہیں جہاں

    شیریں مثال انگبیں

    ہر زعفراں کے پھول میں

    عکس جمال حورعیں

    وہ مالوے کی چاندنی

    گم جس میں ہوں دنیا و دیں

    اس خطۂ نیرنگ میں

    ہر اک فضا حسن آفریں

    ہر شے میں حسن زندگی

    دل کش مکاں دل کش زمیں

    ہر مرد مرد خوب رو

    ہر ایک عورت نازنیں

    وہ تاج کی خوش پیکری

    ہر زاویے سے دل نشیں

    صنعت گروں کے دور کی

    اک یادگار مرمریں

    ہوتی ہے جو ہر شام کو

    فیض شفق سے احمریں

    دریا کی موجوں سے الگ

    یا اک بط نظارہ بیں

    یا طائر نوری کوئی

    پرواز کرنے کے قریں

    یا اہل دنیا سے الگ

    اک عابد عزلت گزیں

    نقش اجنتا کی قسم

    جچتا نہیں ارژنگ چیں

    شان ایلورا دیکھ کر

    جھکتی ہے آذر کی جبیں

    چتوڑ ہو یا آگرہ

    ایسے نہیں قلعے کہیں

    بت گر ہو یا نقاش ہو

    تو سب کی عظمت کا امیں

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    دل کش ترے دشت و چمن

    رنگیں ترے شہر و چمن

    تیرے جواں رعنا جواں

    تیرے حسیں گل پیرہن

    اک انجمن دنیا ہے یہ

    تو اس میں صدر انجمن

    تیرے مغنی خوش نوا

    شاعر ترے شیریں سخن

    ہر ذرہ اک ماہ مبیں

    ہر خار رشک نستریں

    غنچہ ترے صحرا کا ہے

    اک نافۂ مشک ختن

    کنکر ہیں تیرے بے بہا

    پتھر ترے لعل یمن

    بستی سے جنگل خوب تر

    باغوں سے حسن افروز بن

    وہ مور وہ کبک دری

    وہ چوکڑی بھرتے ہرن

    رنگیں ادا وہ تتلیاں

    بابنی میں وہ ناگوں کے پھن

    وہ شیر جن کے نام سے

    لرزے میں آئے اہرمن

    کھیتوں کی برکت سے عیاں

    فیضان رب ذو المنن

    چشموں کے شیریں آب سے

    لذت کشاں کام و دہن

    تابندہ تیرا عہد نو

    روشن ترا عہد کہن

    کتنوں نے تجھ پر کر دیا

    قربان اپنا مال دھن

    کتنے شہیدوں کو ملے

    تیرے لیے دار و رسن

    کتنوں کو تیرا عشق تھا

    کتنوں کو تھی تیری لگن

    تیرے جفا کش محنتی

    رکھتے ہیں عزم کوہ کن

    تیرے سپاہی سورما

    بے مثل یکتائے زمن

    بھیشمؔ سا جن میں حوصلہ

    ارجنؔ سا جن میں بانکپن

    عالم جو فخر علم ہیں

    فن کار نازاں جن پہ فن

    رائےؔ و بوسؔ و شیرؔگل

    دنکرؔ، جگرؔ متھلیؔ شرن

    ولاٹھولؔ، ماہرؔ، بھارتی

    بچنؔ، مہادیویؔ، سمنؔ

    کرشننؔ، نرالاؔ، پریمؔ چند

    ٹیگورؔ و آزادؔ و رمنؔ

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    کھیتی تری ہر اک ہری

    دل کش تری خوش منظری

    تیری بساط خاک کے

    ذرے ہیں مہر و مشتری

    جہلم کاویری ناگ وہ

    گنگا کی وہ گنگوتری

    وہ نربدا کی تمکنت

    وہ شوکت گوداوری

    پاکیزگی سرجو کی وہ

    جمنا کی وہ خوش گوہری

    دلربہ آب نیلگوں

    کشمیر کی نیلم پری

    دل کش پپیہے کی صدا

    کوئل کی تانیں مد بھری

    تیتر کا وہ حق سرہ

    طوطی کا وہ ورد ہری

    صوفی ترے ہر دور میں

    کرتے رہے پیغمبری

    چشتیؔ و نانکؔ سے ملی

    فقر و غنا کو برتری

    عدل جہانگیری میں تھی

    مضمر رعایا پروری

    وہ نورتن جن سے ہوئی

    تہذیب دور اکبری

    رکھتے تھے افغان و مغل

    اک صولت اسکندری

    راناؤں کے اقبال کی

    ہوتی ہے کس سے ہم سری

    ساونت وہ یودھا ترے

    تیرے جیالے وہ جری

    نیتی ودر کی آج تک

    کرتی ہے تیری رہبری

    اب تک ہے مشہور زماں

    چانکیہؔ کی دانش وری

    ویاس اور وشوامتر سے

    منیوں کی شان قیصری

    پاتنجلی و سانکھ سے

    رشیوں کی حکمت پروری

    بخشے تجھے انعام نو

    ہر دور چرخ چنبری

    خوش گوہری دے آب کو

    اور خاک کو خوش جوہری

    ذروں کو مہر افشانیاں

    قطروں کو دریا گستری

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    تو رہبر نوع بشر

    تو امن کا پیغام بر

    پالے ہیں تو نے گود میں

    صاحب خرد صاحب نظر

    افضل تریں ان سب میں ہے

    باپو کا نام معتبر

    ہر لفظ جس کا دل نشیں

    ہر بات جس کی پر اثر

    جس نے لگایا دہر میں

    نعرہ یہ بے خوف و خطر

    بے کار ہیں تیر و سناں

    بے سود ہیں تیغ و تبر

    ہنسا کا رستہ جھوٹ ہے

    حق ہے اہنسا کی ڈگر

    درماں ہے یہ ہر درد کا

    یہ ہر مرض کا چارہ گر

    جنگاہ عالم میں کوئی

    اس سے نہیں بہتر سپر

    کرتا ہوں میں تیرے لیے

    اب یہ دعائے مختصر

    رونق پہ ہوں تیرے چمن

    سرسبز ہوں تیرے شجر

    نخل امید بہتری

    ہر فصل میں ہو بارور

    کوشش ہو دنیا میں کوئی

    خطہ نہ ہو زیر و زبر

    تیرا ہر اک باسی رہے

    نیکو صفت نیکو سیر

    ہر زن سلیقہ مند ہو

    ہر مرد ہو صاحب ہنر

    جب تک ہیں یہ ارض و فلک

    جب تک ہیں یہ شمس و قمر

    میرے وطن، پیارے وطن

    راحت کے گہوارے وطن

    ہر دل کے اجیارے وطن

    ہر آنکھ کے تارے وطن

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Arsh (Pg. 297)
    • Author : Arsh Malsiyani
    • مطبع : Ali Hujwiri Publisher H. 811, A Androon, Akbari Gate, Lahore

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY