مجھے اک شعر کہنا ہے

بقا بلوچ

مجھے اک شعر کہنا ہے

بقا بلوچ

MORE BY بقا بلوچ

    اداسی کے حسیں لمحوں

    کہاں ہو تم

    کہ میں کب سے

    تمہاری راہ میں

    خوابوں کے نذرانے لئے بیٹھا

    حسیں یادوں کی جھولی میں

    کہیں گم ہوں

    ارے لمحو

    مجھے اس خواب سے بیدار کرنے کے لئے آؤ

    میری سوچوں کے خاکوں میں

    ارے لمحوں

    کوئی اک رنگ بھر جاؤ

    مجھے اک شعر کہنا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY