ننھی چیزیں

علقمہ شبلی

ننھی چیزیں

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    تھا اندھیرا ہر طرف

    راہ بھی ملتی نہ تھی

    ایک ننھا سا دیا

    روشن ہوا

    اور اندھیرا چھٹ گیا

    اک مسافر رات کو

    کھا رہا تھا ٹھوکریں

    چاند کی ننھی کرن

    چھٹکی ذرا

    اور رستہ مل گیا

    تھا پریشاں دیر سے

    ایک دہقاں دھوپ میں

    ایک ٹکڑا ابر کا

    آیا وہاں اور سایہ ہو گیا

    باغ میں اڑتی تھی دھول

    سارے پتے زرد تھے

    ایک ننھی سی کلی

    چٹکی جو کلی

    مسکرا اٹھا چمن

    نہ تھا دل میں ولولہ

    زندگی خاموشی تھی

    ایک ننھی سی ہنسی

    نغمہ بنی

    کھل اٹھی دل کی کلی

    ایک دیا

    ایک کرن

    ایک ٹکڑا ابر کا

    اک کلی

    ایک ننھی سی ہنسی

    ہیں نشان زندگی

    روشنی ہی روشنی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY