نظم

MORE BYسرفراز خالد

    چپ رہوں گا تو زباں یوں بھی رہے گی بے کار

    اور بولوں تو زباں کاٹ ہی لی جائے گی

    کیوں نہ کچھ بول ہی لوں میں کہ پس قتل زباں

    یہ تو افسوس نہ ہوگا کہ زباں رہتے ہوئے

    مجھ کو اظہار خیالات کی جرأت نہ ہوئی

    مجھ سے اس ظلم و ستم کی بھی شکایت نہ ہوئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY