پریتی

MORE BYشفیق فاطمہ شعریٰ

    تم نہیں ہو مٹنے والی نہیں

    پاتی ہو جنم تم نئے نئے

    ہر نئی بہار کے پھولوں میں

    مانند حیات تمہارے پتے بھی پیلے پڑ جاتے ہیں

    مانند حیات تمہیں بھی ڈھک دیتی ہے برف

    پر تمہاری مٹی میں پریتی

    پکے بچنوں کے بیج دبے ہیں

    پورا ہونا ہے جن کو بسر اوے میں بھی

    پیت نہ کرنے کی یہ دھن بیکار ہے

    یہ مہکار بھرا جھونکا

    لوٹ آتا ہے ایک نہ ایک دن

    آتم نگر میں

    جیسے رات ستاروں بھری

    اور سمانے لگتی ہو تم روم روم میں پریتی

    پہلے سے پاکیزہ

    تم پاک ہو اور اسی کارن ہوا امر

    جب تم ہوتی ہو تب نیلاہٹ سے

    جھنڈ کے جھنڈ سفید ملائم ہنسوں کے

    جن کو ہم مرے کھپے سمجھے تھے

    لوٹ آتے ہیں

    پھول پھول سے پتیاں کھلاتی رہتی ہو تم نئی نئی

    تم سدا سدا کے نور کو راگ بنا دیتی ہو

    نئی نئی آوازوں سے جنما ہوا راگ

    تم امر ہو پریتی

    جیسے بہار

    مأخذ :
    • کتاب : Silsila-e-makalmat (Pg. 355)
    • Author : Shafique Fatma Shora
    • مطبع : Educational Publishing House (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY