قریب آؤ

خالد شریف

قریب آؤ

خالد شریف

MORE BYخالد شریف

    قریب آؤ

    اور اپنی سانسیں مرے بدن کے ترازوؤں کو ادھار دے دو

    مرے بدن کے اداس گوشے

    ترازوؤں کے قدیم مسکن

    یہ سوچتے ہیں کہ کب پرندوں کی پھڑپھڑاہٹ سکوت کے کان میں بجے گی

    بہشت موعود

    اپنے سیبوں کی قاشیں

    میرے بنجر قدیم ہونٹوں پہ کب دھرے گی

    طلوع ہستی کا دائرہ کب مرے بدن پر محیط ہوگا

    میں سرد خانوں سے آ رہا ہوں

    قریب آؤ

    اور اپنی سانسیں مرے بدن کے ترازوؤں کو ادھار دے دو

    مآخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 40)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY