قیامت

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    چلو اک رات تو گزری

    چلو سفاک ظلمت کے بدن کا ایک ٹکڑا تو کٹا

    اور وقت کی بے انتہائی کے سمندر میں

    کوئی تابوت گرنے کی صدا آئی

    یہ مانا رات آنکھوں میں کٹی

    ایک ایک پل بت سا بن کر جم گیا

    اک سانس تو اک صدی کے بعد پھر سے سانس لینے کا خیال آیا

    یہ سب سچ ہے کہ رات اک کرب بے پایاں تھی

    لیکن کرب ہی تخلیق ہے

    اے پو پھٹے کے دل ربا لمحو گواہی دو

    یوں ہی کٹتی چلی جائیں گی راتیں

    اور پھر وہ آفتاب ابھرے گا

    جو اپنی شعاعوں سے ابد کو روشنی بخشے گا

    پھر کوئی اندھیری دھرتی کو نہ چھو پائے گا

    دانایان مذہب کے مطابق حشر آ جائے گا

    لیکن حشر بھی اک کرب ہے

    ہر کرب اک تخلیق ہے

    اے پو پھٹے کے دل ربا لمحو گواہی دو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    قیامت نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY