راہرو

MORE BYمحمد دین تاثیر

    آج میں دور بہت دور نکل آیا ہوں

    بے طلب تگ و دو

    دل میں کاوش نہ تلاش

    نہ کوئی خواہش مخفی نہ تمنائے معاش

    ہوس خام نہ سودائے تمام

    یوں ہی چلتا ہوا چلتا ہوا آ پہنچا ہوں

    پے بہ پے گام بہ گام

    کس قدر دور نکل آیا ہوں

    اس سے پہلے بھی چلا ہوں میں نئی راہوں پر

    شاہراہوں سے پرے

    خار زاروں میں گھسٹتی ہوئی اک سرخ لکیر

    اک سسکتی ہوئی دل دوز نفیر

    سرسراتے ہوئے ملبوس

    مہکتی ہوئی سانس

    لذت و کرب کا مدھم بم و زیر

    آج لیکن میں بہت دور نکل آیا ہوں

    اور اک شام سر راہ گزار

    وہ مری لغزش پا میری وہ بے راہروی

    خود فراموش سبک دوش عمل

    اپنے اجداد کے ناکردہ گناہوں کی عقوبت سے بری

    اک ہرن چوکڑی بھرتا ہوا خاموش خرام

    شام کے وقت سر راہ گزار

    میں بہت دور بھٹک نکلا تھا

    آج لیکن میں بہت دور نکل آیا ہوں

    آپ سے آپ بہت دور بہت دور نکل آیا ہوں

    شاہراہوں سے پرے دور گزر گاہوں سے

    بے طلب بے تگ و دو

    خانقاہوں سے الگ دور صنم خانوں سے

    ہوس خام نہ سودائے تمام

    یوں ہی چلتا ہوا چلتا ہوا آ پہنچا ہوں

    پے بہ پے گام بہ گام

    کس قدر دور بہت دور نکل آیا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 52)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY