رات کے بارہ بجے

مخدومؔ محی الدین

رات کے بارہ بجے

مخدومؔ محی الدین

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    رات کے کوئی بارہ بجے ہوں گے

    گرمی ہے

    سڑکوں پہ کوئی نہیں

    بوڑھا درویش بھی جا چکا ہے

    اس جذامی بھکارن کی گاڑی

    بھی نظروں سے اوجھل ہے

    راستہ صاف ہے

    ہوٹلوں سے نکلتی ہوئی لڑکیاں ہیں

    نہ لڑکوں کے جھرمٹ

    منڈیروں پر

    دل میں

    نہ دل کا دھڑکنا

    نہ بھوکی نگاہیں

    نہ سیٹی

    قمقمے

    گردنیں تانے

    چشم بر براہ ہیں

    کوئی گزرے تو گل ہو کے

    ان کا تماشا کریں

    سرکتے سرکتے

    وہ فٹ پاتھ سے

    کوئی چکر کی ہریالی پر آ جمے ہیں

    چاند نکلا

    تو چاروں نے چلایا

    (سانپ کے منہ سے نکلا ہوا جیسے پیلا چھچھوندر)

    لو چاند نکلا

    وہ چاند تنہا ہے

    اک درد سب کے دلوں میں پگھلنے لگا

    ان کی نظروں نے بوسے لیے چاند کے

    چاند کی پیٹھ کو تھپتھپایا

    بڑے زور سے

    جوش و مستی کے عالم میں

    شیشے میں جتنی بچی تھی

    وہ سب بانٹ کر

    قہقہے مار کے

    پی گئے

    اور گلے مل کے

    اک دوسرے کو بہت دور تک

    چومتے بھی رہے

    ناچتے ناچتے

    چاروں رونے لگے

    ہر ایک کے منہ سے نکلا

    !یارو

    ماں یاد آتی ہے، جاتا ہوں

    میں نے تورات و انجیل و قرآن میں

    یرمیہ ہاجرہ اور یعقوب

    کے کرب کی داستانیں پڑھی ہیں

    ان کا رونا سنا ہے

    اور رویا بھی ہوں

    آج بھی رو رہا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے