رقیب شوق

زبیر رضوی

رقیب شوق

زبیر رضوی

MORE BYزبیر رضوی

    ہم ابھی کچھ دیر پہلے ساتھ تھے

    شہر سارا یوں لگا تھا

    جیسے اپنے ہی تعاقب میں

    کرن سورج کی تھامے چل رہا ہے

    اس کی آنکھیں بن کے پتھرا اٹھ رہی تھیں

    قرب کے آئینے چھن سے ٹوٹ کر ریزہ ہوئے تھے

    ہونٹ اپنے سل گئے تھے

    جسم اپنے جل گئے تھے

    ہم بچھڑ کے نا مرادوں کی طرح واپس ہوئے تو

    شہر سارا اجنبی سا ہو گیا ہے

    اس کی آنکھوں پر سیاہ پٹی بندھی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY