سائے

MORE BYمحمد دین تاثیر

    ایسی راتیں بھی کئی گزری ہیں

    جب تری یاد نہیں آتی ہے

    درد سینے میں مچلتا ہے مگر

    لب پہ فریاد نہیں آتی ہے

    ہر گنا سامنے آ جاتا ہے

    جیسے تاریک چٹانوں کی قطار

    نہ کوئی حیلۂ تیشہ کاری

    نہ مداوائے فرار

    ایسی راتیں بھی ہیں گزری مجھ پر

    جب تری راہ گزر میں سائے

    ہر جگہ چار طرف تھے چھائے

    تو نہ تھی تیری طرح کے سائے

    سائے ہی سائے تھے لرزاں لرزاں

    کبھی آئے کبھی بھاگے کبھی بھاگے کبھی آئے

    سائے ہی سائے تھے تری راہ گزر کے سائے

    ایسی راتیں بھی ہیں گزری مجھ پر

    جب تری یاد نہیں آتی ہے

    لب پہ فریاد نہیں آتی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. ایم ڈی تاثیر)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000
    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 54)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY