سائے کا سفر

ساقی فاروقی

سائے کا سفر

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    سرپٹ بھاگتے آدمیوں کے

    سائے کٹ کر

    ریل کے ڈبوں کی قبروں میں گرتے جائیں

    ہانپتے پہیے

    سمتوں کے گونگے ساگر میں

    شور مچائیں

    آنکھوں میں آنسو لہرائیں

    ہونٹوں پر بوسے کمھلائیں

    روح الجھتی جائے

    سوچ رہا ہوں

    اپنے دھیان کا پردہ کھینچ کے

    سب چہروں کے چاند بجھا دوں

    سب سمتوں اور سب رستوں کو چکمہ دوں

    اور کہیں نہ جاؤں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    سائے کا سفر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY