سال نو

انجم اعظمی

سال نو

انجم اعظمی

MORE BYانجم اعظمی

    INTERESTING FACT

    (علی گڑھ 31دسمبر50 ؁ء کی شب)

    اب رات ڈھل رہی ہے کوئی دو کا وقت ہے

    آنکھوں میں نیند جھول رہی ہے ابھی تلک

    لیکن میں سال نو کے لئے جاگتا رہوں

    امید کے چراغ جلاؤں نئے نئے

    بیٹھا ہوں خامشی کی نواؤں کو چھیڑ کر

    اپنے غموں سے آج بھی فرصت نہیں مجھے

    پلکوں پہ آج بھی تو لرزتے ہیں یہ دیے

    لیکن انہیں غموں سے نیا آستاں بنا

    وجہ سکوں ہے آج خیال گریز پا

    ٹوٹے ہوئے دلوں کو سہارا بھی دے سکا

    جب دل کی دھڑکنوں سے ملے درس آگہی

    پھر کس لئے جنوں میں کوئی انتشار ہو

    نا کامیاں حیات کی شرما نہ جائیں گی

    اس دیس کی فضاؤں سے گر ہم کو پیار ہو

    ان مے کدوں سے کل بھی نہ تھا مجھ کو واسطہ

    جن میں لہو کے جام اٹھاتے ہیں حکمراں

    احساس کی نگاہ مگر دیکھتی ہے اب

    کچھ اور تیز گام ہوا کاروان شوق

    اور سال نو بھی ساتھ اسی کارواں کے ہے

    ان جھونپڑوں میں آج چراغاں نہیں تو کیا

    دو چار سال اور بھی امکاں نہیں تو کیا

    فصل بہار آئے گی جھومیں گی ڈالیاں

    پھولوں میں پات پات میں رنگت سمائے گی

    ہوں گے کبھی تو جام بہ کف خاص و عام سب

    ہر ہر نگاہ ساغر و مینا اٹھائے گی

    زلف حیات شوق سے پرچم اڑائے گی

    میں آج سال نو کے لئے جاگتا رہوں

    امید کے چراغ جلاؤں نئے نئے

    مآخذ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY