سوال

MORE BYحارث خلیق

    یہ ساری دنیا سوالیہ ہے

    ہر ایک چہرہ سوال اندر سوال ہے اور

    ہر ایک منظر سوال بن کر

    جواب کا منتظر کھڑا ہے

    اگر کوئی سامنے بھی آئے

    اور آ کے اک بات کا بھی ہم کو

    جواب دے دے

    تو در حقیقت جواب میں بھی

    نہ جانے کتنے سوال ہوں گے

    ہزار ہا نت نئے مسائل ہمیں ملیں گے

    کہ آج تک تو یہی ہوا ہے

    جواب ہی سے سوال نکلے

    جواب ہی میں سوال ڈھونڈے

    یہ ساری دنیا سوالیہ ہے

    خود آدمی اک سوال ہے اور

    اسی نے پیہم سوال اٹھا کے

    سوال کرنے کی ریت ڈالی

    سوال اول بھی آدمی ہے

    سوال آخر بھی آدمی ہے

    جواب مطلق بھی آدمی ہے

    اگر یقیں ہو

    تو آدمی پر کمند ڈالیں

    سوال ہی میں جواب ڈھونڈیں

    مأخذ :
    • کتاب : Ishq ki taqveem me.n (Pg. 117)
    • Author : HARIS KHALEEQ
    • مطبع : Hoori Nurani, Maktaba Daniyal, Victoria Chaimber 2 (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY