شب چراغ

محمود ایاز

شب چراغ

محمود ایاز

MORE BY محمود ایاز

    بسوں کا شور دھواں گرد دھوپ کی شدت

    بلند و بالا عمارات سرنگوں انساں

    تلاش رزق میں نکلا ہوا یہ جم غفیر

    لپکتی بھاگتی مخلوق کا یہ سیل رواں

    ہر اک کے سینے میں یادوں کی منہدم قبریں

    ہر ایک اپنی ہی آواز پا سے رو گرداں

    یہ وہ ہجوم ہے جس میں کوئی فلک پہ نہیں

    اور اس ہجوم سر راہ سے گزرتے ہوئے

    نہ جانے کیسے تمہاری وفا کرم کا خیال

    مرے جبیں کو کسی دست آشنا کی طرح

    جو چھو گیا ہے تو اشکوں کے سوتے پھوٹ پڑے

    سموم و ریگ کے صحرا میں اک نفس کے لیے

    چلی ہے باد تمنا تو عمر بھر کی تھکن

    سر مژہ سمٹ آئی ہے ایک آنسو میں

    یہ وہ گہر ہے جو ٹوٹے تو خاک پا میں ملے

    یہ وہ گہر ہے جو چمکے تو شب چراغ بنے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شب چراغ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY